jump to navigation

Dua Di Hum Ney 02/05/2009

Posted by Samia in Sad Poetry.
Tags: , , , , , , , , , , , , , , ,
trackback

khaa ker zakhum dua di hum ney
bas yoon umer bita di hum ney

raat kuch aisay dil dukhta tha
jaisay aass bujha di hum ney

sannatay ke shaher main tujh ko
be-awaz sada di hum ney

dekh ke jis ko dil dukhta tha
wo tasweer jala di hum ney

Ae “Sami” tujhay samjhaye kon
kion ker umer ghanwa di hum ney

تبصرے»

1. جاوید گوندل ۔ بآرسیلونا ، اسپین - 02/10/2009

کھا کر زخم دعا دی ہم نے
بس یونہی عمر بتا دی ہم نے

عمریں اور قرن بیت جاتے ہیں مگر زخم ہر روز اس طرح تازہ ہوتے ہیں جیسے ابھی کا۔ سامنے،چند لمحے پہلے کا ستم ہو۔ اور عمرِ رواں عمرِ ماضی میں بدل جاتی ہے


جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: